مونجی والی ڈرل دیکھیں اور جانیں کہ چھٹے کے ذریعے دھان کاشت ہوسکتا ہے؟

گزشتہ آرٹیکل میں ہم آپ کو بتا چکے ہیں کہ اگر آپ دھان کی فصل بذریعہ ڈرل کاشت کریں گے تو کس طرح آپ کو 18 ہزار روپے کی بچت ہو گی۔
آرٹیکل کی تفصیل جاننے کے لئے اس لنک پر کلک کریں.

آج ہم آپ کو دھان والی ڈرل کے بارے میں بتائیں گے!

کیا دھان والی ڈرل گندم والی ڈرل سے مختلف ہے؟

اکثر کاشتکار یہ پوچھتے ہیں کہ کیا گندم پا کپاس والی ڈرل سے دھان کو ڈرل کیا جا سکتا ہے؟
اس سلسلے میں گزارش یہ ہے کہ دھان والی ڈرل گندم یا کپاس والی ڈرل سے بالکل الگ ہے. نیچے تصویر میں دھان والی ڈرل ملاحظہ کریں.

ڈرل کی یہ تصویر پیچھےسے کھینچی گئی ہے

پاکستان میں یہ ڈرل گرین لینڈ انجینئرنگ ڈسکہ (سیالکوٹ) والوں نے چند سال قبل تیار کی ہے. گرین لینڈ والے یہ ڈرل چھوٹے اور بڑے دونوں سائزوں میں تیار کرتے ہیں. چھوٹے سائز کی قیمت ایک لاکھ 20 ہزار جبکہ بڑے سائز کی قیمت ایک لاکھ پینتیس ہزار روپے رکھی گئی ہے.
یہ ڈرل تقریباََ 40 منٹ میں ایک ایکڑ کاشت کر دیتی ہے.
ڈرل کے پچھلی جانب نظر آنے والے چھوٹے چھوٹے ڈبوں میں بیج ڈال دیا جاتا ہے جبکہ اگلے ڈبے میں کھاد ڈال دی جاتی ہے. اس طرح بیج اور کھاد اس ڈرل میں ایک ساتھ ڈرل ہوتے جاتے ہیں.

تصویر میں نظر آنے والے چھوٹے چھوٹے ڈبوں میں بیج جبکہ آگے والے بڑے والے ڈبے میں کھاد ڈالی جاتی ہے

بیج والے ڈبوں میں ایک ایکڑ کا بیج ڈالا جا سکتا ہے. اگلا ایکڑ شروع کرنے سے پہلےدوبارہ بیج ڈالنا پڑتا ہے. چھوٹے چھوٹے ڈبوں میں گھومنے والی پلیٹیں لگائی گئی ہیں جو بیج کو اس طرح سے اٹھاتی ہیں کہ بیج ٹوٹنے نہیں پاتا.
یہ تو ہو گئی ڈرل والی بات . . .
اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر ایک کسان کے پاس ڈرل کی سہولت موجود نہیں ہے تو پھر وہ کیا کرے؟
اس حوالے سے گزارش یہ ہے کہ جب تک آپ کے ہاں ڈرل کا انتظام نہیں ہو جاتا آپ دھان کی فصل کو گندم کی طرح چھٹے کے ذریعے کاشت کر سکتے ہیں.

دھان کو چھٹے سے کاشت کرنے کا طریقہ کیا ہے؟

گوجرانوالہ کے ایک کاشتکار نے گزشتہ سال سپر باسمتی کی ورائٹی کو چھٹے کے ساتھ کاشت کیا اور 55 من فی ایکڑ پیداوار حاصل کی۔

چھٹے سے دھان کاشت کرنے کا طریقہ یہ ہے کہ زمین میں ہل چلانے کے بعد ہلکا سہاگہ کر کے زمین کے سیاڑ ختم کر دیں۔ اب ہلکا سہاگہ لگی ہوئی زمین پر گندم کی طرح دھان کے بیج کا چھٹہ کر دیں. چھٹہ کرنے کے بعد اب پھر سہاگہ لگائیں اور سہاگے کے فوراََ بعد پانی لگا دیں۔

یہ بات ذہن میں رہے کہ اگر آپ نے چھٹہ لگانے سے پہلے سیاڑ ختم نہ کئے اور ویسے ہی چھٹہ لگا کر سہاگہ دے دیا تو پھر وہ بیج جو سیاڑوں میں چلا جائے گا اس پر مٹی زیادہ چڑھ جائے گی اور زیادہ گہرائی میں جانے کی وجہ سے بیج اگ نہیں سکے گا۔ اس لئے چھٹے سے پہلے زمین کے سیاڑ ختم کرنا ضروری ہیں۔ خیال رہے کہ دھان کا بیج اگر ایک انچ سے زیادہ گہرائی میں چلا جائے تو اگاؤ مشکوک ہو جاتا ہے۔

چھٹے کے بعد خالی سہاگہ لگانے سے بیج پر ہلکی سی مٹی چڑھ جاتی ہے جو بیج کے اگاؤ کے لئے مناسب ہوتی ہے۔

ڈے اے پی کے ساتھ ہی 10 کلو گرام سلفر کا چھٹہ دینے سے اگاؤ مزید اچھا ہو جاتا ہے۔ سلفر زیادہ مہنگا لینے کی ضرورت نہیں ہے۔ 80 روپے فی کلوگرام والا سلفر بھی اگر آپ ڈال دیں تو وہ زمین کو نرم کر دیتا ہے جس سے اگاؤ اچھا ہوتا ہے۔

بیج کو 24 گھنٹے پانی میں بھگو کر چھٹہ کرنے سے اگاؤ کے نتائج اور بھی بہتر آتے ہیں۔ زمین کو بھگونے کا طریقہ یہ ہے ایک مناسب برتن میں پھپھوندی کش زہر کا محلول بنا کر اس میں چاول کا بیج بھگو دیں۔ 24 گھنٹے کے بعد بیج پانی سے باہر نکال کر خشک کر لیں۔ اب اس بیج کو زمین میں چھٹہ کرنے کے لئے استعمال کریں۔

ایک دفعہ پھر واضح‌ کیا جا رہا ہے کہ چھٹے اور ڈرل کے لئے کدو کرنے کی ہرگز ضرورت نہیں ہے۔
کاشت کے بعد پہلے دو تین پانی تر وتر حالت میں لگائیں جبکہ اس کے بعد وتر پر پانی لگاتے رہیں. ڈرل کی طرح بزریعہ چھٹہ کاشت کی ہوئی دھان میں بھی پانی کھڑا رکھنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

ڈرل اور چھٹے میں کتنا بیج ستعمال کرنا چاہئے؟

بغیر گدو کے دھان کاشت کرنے والے بعض کاشتکار یہ سمجھتے ہیں کہ ڈرل اور چھٹے کے لئے 8 سے 10 کلو گرام فی ایکڑ بیج کافی ہے. جبکہ ماہرین بتاتے ہیں کہ چھٹا یا ڈرل دونوں صورتوں میں بیج کی مقدار 12 کلوگرام فی ایکڑ رکھنا بہتر ہے. واضح رہے کہ بیج کی یہ مقدار باسمتی اور فائن ورائٹیوں کے لئے ہے. موٹے چاول کی صورت میں بیج کی مقدار 2 کلو گرام فی ایکڑ بڑھا دی جاتی ہے۔

چھٹے والی دھان میں جڑی بوٹیوں کو کنٹرول کرنے کا طریقہ کیا ہے؟

چھٹے یا ڈرل سے کاشت کئے گئے دھان میں جڑی بوٹی کنٹرول کرنا اس لئے مشکل سمجھا جاتا تھا کیونکہ مارکیٹ میں اس حوالے سے موثر زہریں دستیاب نیہیں تھیں۔ لیکن اب مارکیٹ میں ایک ایسی زہر دستیاب ہے جو چھٹے یا ڈرل سے کاشت کئے گئے دھان میں جڑی بوٹیوں کا مکمل صفایا کرسکتی ہے۔
یہ تاراگروپ کی جڑی بوٹی مار زہر فل کئیر ہے۔ یہ دوائی تین زہروں کا مجموعہ ہے۔ جن میں سائی ہیلو فاپ،(Cyhalofop) بسپائری بیک سوڈیم (Bispyribac Sodium) اور پنناکسولم (Penoxsulam) شامل ہیں۔

زہر سپرے کرنے کا طریقہ یہ ہے کہ ایک ایکڑ فصل کے لئے 100 لیٹر پانی میں 500 ملی لیٹر زہر ملا کرتر وتر حالت میں سپرے کیا جائے تو یہ زہر دھان کی فصل کو نقصان پہنچائے بغیر سوانکی، ڈیلا، مدھانہ گھاس اور گھوڑا گھاس سمیت تمام چوڑے پتے والی جڑی بوٹیوں کو مکمل طور پر تلف کر دیتی ہے۔

یاد رہے کہ یہ زہر دھان کاشت کرنے کے 12 سے 15 دن کے اندر اندر سپرے کرنے سے ہی بہترین نتائج حاصل ہوتے ہیں۔

لیکن اگر اکیلے گھوڑا گھاس کا مسئلہ ہو تو پھر کینزو کمپنی کی جڑی بوٹی مار دوائی سن گرین سپرے کریں۔ سن گرین میں میٹا می فاپ (Metamifop) زہر ہے

چھٹے والی دھان کی نشوونما کدو والی فصل سے کس طرح مختلف ہے؟

ایک بات ذہن میں رہے کہ چھٹے والی فصل میں بوٹا اس طرح سے جھاڑ نہیں بناتا جس طرح سے کدو والی فصل میں بناتا ہے. لیکن اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ آپ کی پیداوار بھی کم ہوگی.
بات دراصل یہ ہے کہ چھٹے والی دھان کے کھیت میں پودوں کی تعداد ایک لاکھ سے اوپر جلی جاتی ہے. جبکہ کدو والی فصل میں پودوں کی تعداد 80 ہزار بھی نہیں ہوتی. اس طرح جھاڑ نہ بننے کی وجہ سے بظاہر تو یہی لگتا ہے کہ کھیت میں پودے کم ہیں جبکہ در حقیقت چھٹے والے کھیت میں آپ کے پودے کدو والے دھان سے بھی زیادہ ہوتے ہیں.
اس لئے آپ کو جھاڑ نہیں بلکہ پیداوار کو دیکھنا چاہئے.
مجھے امید ہے کہ یہ مضمون پڑھنے والے کسان حضرات ایک آدھ ایکڑ پر ڈرل یا چھٹے والا تجربہ ضرور کریں گے.

تحریر
ڈاکٹر شوکت علی
ماہرِ توسیعِ زراعت، زرعی یونیورسٹی فیصل آباد

وارننگ
اس مضمون کے کسی بھی حصے کو مصنف کی اجازت کے بغیر:
1. کاپی کر کے کسی ویب سائٹ پر لگانا
2. مصنف کا نام ہٹا کر اسے اپنا ظاہر کرنا
3. ویڈیو بنانے کے لئے استعمال کرنا
اخلاقاََ و قانوناََ جرم ہے اور علمی چوری کے زمرے میں آتا ہے.
البتہ ایگری اخبار اس مضمون کا لنک شئیر کرنے کی حوصلہ افزائی کرتا ہے.
اس تحریر کے جملہ حقوق بحق مصنف محفوظ ہیں.

اظہارِ تشکر
یہ مضمون لکھنے کے لئے ترقی پسند کاشتکاران و ماہرینِ زراعت جناب مظہر گھمن سیالکوٹ اور جناب چوہدری باسط گوجرانوالہ کے تجربات سے استفادہ کیا گیا ہے.
اس کے علاوہ پاکستان کے سرکاری تحقیقی اداروں میں ہونے والی تحقیق سے بھی مدد لی گئی ہے

Share Please

اپنا تبصرہ بھیجیں