کیلا موٹاپا، بلڈ پریشر اور معدے کے لئے نہائیت مفید ہے

کیلا موٹاپا، بلڈ پریشر اور معدے کے لئے نہائیت مفید ہے

دنیا یہ بات تسلیم کرتی ہے کہ پہلے پہل کیلا صرف ملائشیا میں ہی پایا جاتا تھا.
بعد ازاں یہ ملائشیا سے ملک فلپائن میں اگایا جانے لگا جہاں سے یہ پھل انڈیا میں متعارف ہو گیا.
تاریخی حوالوں کے مطابق، انڈیا میں یہ درخت حضرت عیسی علیہ السلام کی پیدائش سے کم و بیش چار سوسال پہلے موجود تھا.
آج کل پاکستان میں صوبہ سندھ کیلے کا گھر ہے جہاں کیلے کے باغات صوبہ بھر میں لہلہاتے ہوئے نظر آتے ہیں.
عام طور پر لوگ سمجھتے ہیں کہ کیلا کھانے سے وزن بڑھتا ہے جبکہ حقیقت اسکے بالکل برعکس ہے.
حقیقت یہ ہے کہ کیلا کھانے سے آپ کا وزن بڑھتا نہیں بلکہ کم ہوتا ہے.
دراصل کیلے میں دو غذائی اجزاء یعنی کولین اور وٹامن بی مناسب مقدار میں پائے جاتے ہیں اور یہ دونوں اجزاء جسم میں چربی جمع نہیں ہونے دیتے. خاص طور پر بڑھے ہوئے پیٹ کے مقام پر یہ چربی کو پگھلا دیتے ہیں.
اس لئے اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے پیٹ کی توند باہر نکلی ہوئی نظر نہ آئے تو پھر کیلے کو اپنی خوراک کا ضرور حصہ بنائیں.
اس کے علاوہ کیلے میں پوٹاشیم کی کثیر مقدار پائی جاتی ہے. دراصل پوٹاشیم ایک ایسا غذائی عنصر ہے جو بلڈ پریشر کو نارمل رکھنے اور دل کے افعال کی درستگی کے لئے نہائیت اہم ہے.
لہذا اگر آپ کا بلڈ پریشر زیادہ رہتا ہے یا آپ کو دل کی تکلیف ہے تومتواتر کیلے کھانے سے آپ کی تکلیف میں کمی واقع ہو سکتی ہے.
اسی طرح کیلا آپ کے معدے کو بھی درست رکھتا ہے.
دراصل کیلے میں غذائی ریشوں ( یعنی غذائی دھاگوں) کی مناسب مقدار پائی جاتی ہے جو غذا ہضم کرنے کے نظام میں معاون ثابت ہوتی ہے.

یہ مضمون لکھنے کے لئے ہمدرد صحت اور دی ورلڈ ہیلدِاسٹ فوڈ سے مدد لی گئی ہے.

Share Please

اپنا تبصرہ بھیجیں